ایک اور سمندری طوفان بھارتی ریاست کے ساحل سے ٹکراگیا

بھارتی میڈیا کے مطابق سمندری طوفان تا ؤتےکے بھارتی ساحل سے ٹکرانے کے بعد مزید ایک اور طوفان بھارتی ساحل سے ٹکرا چکا ہے۔

بھارتی میڈیا کے جانب سے جاری کردہ تفصیلات کے مطابق نیا سمندری طوفان بھارتی ریاست اڑیسہ کے ساحل سے ٹکرا گیا ہے۔ اس طوفان کا نام یاس بتایا جا رہا ہے۔

بھارتی میڈیا کا کہنا ہے کہ ریاست اڑیسہ کے ساحلی علاقوں سے تقریبا بارہ لاکھ افراد کا انخلا مکمل کر لیا گیا ہے۔ طوفان کی وجہ سے اڑیسہ اور مغربی بنگال میں تیز ہواؤں کے ساتھ طوفانی بارشیں جاری ہیں۔

طوفان کی وجہ سے ہلاک ہونے والے افراد کے متعلق بھارتی میڈیا کا کہنا ہے کہ طوفان کے باعث مختلف حادثات ہونے کے وجہ سے دو افراد جاں بحق ہوگئے ہیں جب کے دس لاکھ افراد کو ساحل سے دور لے کر جایا گیا ہے۔

بھارتی میڈیا کے مطابق اڑیسہ کے شہر بھوبنیشور کے ایئرپورٹ کو کل تک بند کرکے پروازوں کو کینسل کر دیا گیا ہے جبکہ کولکتہ ایئرپورٹ میں بھی پروازوں کو کینسل کر دیا گیا ہے۔

بھارت کا لڑاکا طیارہ گر کر تباہ ہو گیا

بھارت کا لڑاکا طیارہ پنجاب میں گر کر تباہ ہو گیا

ذرائع کے مطابق بھارت کا لڑاکا طیارہ مگ ٹونٹی ون پنجاب کے علاقے موگا میں گر کر تباہ ہو گیا طیارہ کا پائلٹ اسکواڈرن لیڈر بھی ہلاک ہوا

بتایا گیاہے کہ طیارہ معمول کے مطابق گشت کر رہا تھا جب وہ گر کر تباہ ہوا

اس حوالے سے بھارتی فصائیہ کا بیان سامنے آیا ہے کہ وہ اس واقعے پر تعزیت کرتا ہے اور ہلاک ہونےوالےپائلٹ کے خاندان کے ساتھ کھڑا ہے

حادثے کی وجوہات ابھی تک معلوم نہیں ہو سکیں فضائیہ نے انکوائیری کا حکم دیا ہے

خیال رہے کہ یہ مگ طیارہ گرنے کا تیسرا واقعہ ہے

بھارتی ہندوؤں نے مسلمان نوجوان کو مار مار کر شہید کر دیا

بھارتی ہندوؤں نے مسلمان نوجوان کو مار مار کر شہید کر دیا پولیس نے ذمہ داروں کو پکڑنے کی بجاۂے مسلمانوں کو ہی گرفتار کر لیا

ذرائع کے مطابق ہندوؤں نے مسلمان شہری کوجے شری رام کا نعرہ لگانے کا مطالبہ کیا مطالبہ نہ ماننے پر انہوں نے مارمار کر شہید کر دیا

تفصیلات کے مطابق ہندو انتہاپسندوں نے تین نوجوانوں پر ظلم کیا ایک موقع پر ہی جاں بحق ہوگیا جبکہ دوسرا شدید زخمی ہے

مقتولہ کی والدہ کا کہنا ہے کہ ميرا بيٹا دوائی لينے گيا تھا، کسی سے کوئی لڑائی جھگڑا نہيں تھا، اُسے مار کر پھينک ديا گیا۔

آصف نامی نوجوان دوائی لینے نکلا تو راستے ميں گھات لگائے بيٹھے انتہاء پسند ہندوؤں کے جتھے نے گاڑی کو روکا، جے شری رام کا نعرہ لگانے کا مطالبہ کيا

نوجوان نے انکار کردیا جس پر آصف کو ڈنڈوں سے مار مار کر قتل کردیا اور لاش آصف کے فارم ہاؤس ميں پھينک دی۔

پوليس نے قاتلوں کو پکڑنے کی بجاۓ 24 مسلم نوجوانوں کو پکڑ لیا

یہ واقعہ سوشل ميڈيا پر ’جسٹس فار آصف‘کے عنوان سے ٹاپ ٹرينڈ بن گيا۔

بھارتي شہری نے لکھا ايک اور مسلمان ہندو دہشت گردوں کی بھينٹ چڑھ گيا۔

ايک شہری نے بھارت ميں مسلمانوں کا قتل عام بند کرنے کا مطالبہ کيا

سمندری طوفان تاؤتے بھارت سے جا ٹکرایا، گلیاں دریا کا منظر پیش کرنے لگیں

ذرائع کے مطابق خطرناک سمندری طوفان تاؤتے بھارت کی ریاست گجرات سے ٹکرا چکا ہے۔

تفصیلات کے مطابق بھارتی میڈیا کا کہنا تھا کہ سمندری طوفان تاؤتے بھارتی ریاست گجرات سے ٹکرا چکا ہے جس کے باعث گجرات میں بہت تیز ہوائی اور شدید بارشیں ہو رہی ہیں۔ شدید بارشوں اور تیز ہواؤں کے باعث بھارتی ریاست گجرات میں چھوٹی چھوٹی گلیاں دریاؤں کا منظر پیش کر رہی ہیں۔ بھارتی میڈیا کے مطابق اس طوفان کی شدت اتنی زیادہ ہے کہ بھارتی ریاست گجرات کے ساحل پر لہروں کی بلندی دس فٹ تک بن رہی ہے۔

بھارتی میڈیا کے مطابق بھارتی محکمہ موسمیات کی جانب سے کہا گیا ہے کہ تو ان کے ٹکرانے کے باعث بھارتی ریاست گجرات کے ساحلوں پر ہواؤں کی رفتار ایک سو تینتیس کلو میٹر فی گھنٹہ ہے۔ محکمہ موسمیات کا مزید کہنا تھا کہ بھارتی ریاست گجرات کے ساحلوں پر طوفان کے ٹکرانے کی کیفیت تو مسلسل دو گھنٹے تک رہ سکتی ہے۔

واضح رہے کہ سمندری طوفان تاؤتے نے پچھلے کئی روز سے پاکستان کو بھی پریشانی میں ڈال رکھا ہے۔ پاکستان کے محکمہ موسمیات کے مطابق سمندری طوفان پاکستان کے ساحل سے کافی فاصلے پر ہے تاہم پاکستانی محکمہ موسمیات کی جانب سے اندازہ لگایا گیا ہے کہ اعداد و شمار کے مطابق سمندری طوفان پاکستان کے ساحل سے نہیں ٹکرائے گا بلکہ پاکستانی ساحل سے کچھ فاصلے پر گزرے گا۔ اسی لیے ساحل پر موجود علاقوں کو خطرہ ہو سکتا ہے۔

کرونا وبا کے ساتھ ایک اور انفیکشن بھارت میں پھیلنے لگا، متعدد افراد بیمار ہوگئے

بھارتی میڈیا کے مطابق بھارت میں کرونا وائرس میں مبتلا افراد ایک اور جان لیوا انفیکشن کالی پھپھوندی میں مبتلا ہونے لگے۔

تفصیلات کے مطابق بھارتی میڈیا کی جانب سے کہا گیا ہے کہ کالی پھوپھوندی نامی اس انفیکشن میں “میو کور مائیسیٹس” قسم سے تعلق رکھنے والی بھی پابندی انسانی جسم کے مختلف اعضاء مثلا ناک ، دماغ اور پھیپھڑوں میں اپنی جڑیں گاڑ کر پھیلنا شروع ہو جاتی ہیں۔ اس انفیکشن کو عام زبان میں کالی پھوپھوندی کہا جاتا ہے مگر سائنسی زبان میں اس کا نام “میو کور مائیکوسس “ہے۔ اس کی پھیلنے کی شرح بہت کم ہے لیکن اگر ایک بار یہ بڑھ جائے تو 54 فیصد افراد کو ہلاک کرنے کی طاقت رکھتی ہے۔

بھارتی ماہرین صحت کی جانب سے اعلان کیا گیا ہے کہ کرونا وائرس میں مبتلا ہونے والے مریضوں میں اضافے کے ساتھ ساتھ کالی پھپھوندی کے بھی متعدد مریض سامنے آئے ہیں۔ صحت ماہرین کا کہنا ہے کہ بھارت میں کالی پھوپھوندی انفیکشن پھیلنے کی سب سے بڑی وجہ اسٹیرائیڈ ہارمونز ہیں جو کہ کرونا وائرس میں مبتلا افراد کے درد کو کم کرنے کے لئے انہیں دیے جاتے ہیں تاہم یہی اسٹیرائیڈز جسم میں داخل ہو کر جسم کے مدافعتی نظام کو کمزور کر دیتے ہیں اور جسم دیگر طبی مسائل کا شکار ہو جاتا ہے۔

بھارتی ماہرین صحت کا مزید کہنا ہے کہ کالی پھوپھوندی انفیکشن میں مبتلا افراد زیادہ تر ذیابیطس کے مرض میں پہلے سے ہی مبتلا ہیں کیونکہ ذیابیطس پہلے ہی انسانی جسم کے مدافعتی نظام کو کمزور کر چکا ہوتا ہے۔ اگر اس کے ساتھ ساتھ مریض کرونا وائرس میں بھی مبتلا ہو جائے تو اس کی حالت بہت ظاہر ہو جاتی ہے جس کی وجہ سے اس کے درد میں شدید اضافہ ہوجاتا ہے جس کو کم کرنے کے لیے اسٹیرائیڈز ہی آخری آپشن بچتا ہے۔

اسٹیرائیڈز سے مریض کا مدافعتی نظام مزید کمزور ہو جاتا ہے جس سے مریض کے کالی پھوپھوندی انفیکشن میں مبتلا ہونے کے چانسز بڑھ جاتے ہیں اور کرونا وائرس وبا سے صحتیاب ہونے کے باوجود ان پر موت کا خطرہ منڈلاتا رہتا ہے۔ بھارتی ماہرین صحت کا کہنا ہے کہ کرونا وائرس کی پہلی لہر کے دوران کالی پھپھوندی کا پھیلاؤ بہت کم تھا تاہم کرونا وائرس کی دوسری لہر کے پھیلاؤ میں اضافے سے کالی پھپھوندی کے پھیلاؤ میں بھی اضافہ ہوا ہے۔

بھارت میں چاند نظر آنے سے متعلق بڑا اعلان کر دیا گیا

بھارت میں چاند نظر آنے سے متعلق بڑا اعلان کر دیا گیا

ذرائع کے مطابق بھارت میں چاند نظر نہیں آیا جس کا باضابطہ اعلان کر دیا ہے تفصیلات کے مطابق مسجد دہلی کے شاہی امام نے اک اعلامیہ جاری کیا جس میں بتایا کہ ماہ شوال کا چاند دیکھنے کا اجلاس ہوا لیکن ملک میں کہیں بھی چاند نظر نہیں آیا

ذرائع کے مطابق اب بھارت میں عید 14 مئی بروز جمعہ کو ہوگی خیال رہے کہ گزشتہ روز عید نماز پڑھانے کے حوالے سے بھی جامع مسجد دہلی کے امام نے اہم پیغام جاری کیا تھا

پیغام میں شاہی امام مفتی محمد مکرم نے بھارتی مسلمانوں کو کہا تھا کہ کرونا پھیل رہا ہے اور بیماری کا خوف بھی ہے یہ عذر شرعی طور پر کافی ہے لہذا مسلم عید نماز گھر پر ہی ادا کریں

دوسری جانب پاکستان میں بھی مرکزی رویت ہلال کمیٹی کا اجلاس آج ہو رہا ہے ذرائع کے مطابق عیدالفطر کی رویت ہلال کمیٹی کا اجلاس آج شروع ہو گیا ہے جس کی سربراہی مولانا عبدالخبیر کر رہے ہیں

اجلاس میں وزارت سائنس اور محکمہ موسمیات کے نمائندے بھی شریک ہیں آج مطلع ابر آلود ہے جس کی وجہ سے چاند نظر نہیں آ رہا تاہم ماہ شوال کے چاند کی پیمائش 12 مئی کی رات 12 بج کر 1 منٹ پر ہو چکی ہے اب کمیٹی شہادتوں کی بنیاد پر فیصلہ کرے گی اگر شہادتیں موصول ہوئیں تو کچھ ہی دیر میں فیصلہ کر لیا جائے گا

بھوک کی شدت نے ماں اور بیٹے کی جان لے لی

بھارتی میڈیا کے مطابق بھارتی علاقہ جبل پور میں بھوک کی شدت کی وجہ سے ایک ماں اور بیٹا جان کی بازی ہارگئے۔

تفصیلات کے مطابق بھارتی میڈیا کی جانب سے کہا گیا ہے کہ بھارت میں جبل پور کے علاقے رنجی سے تعلق رکھنے والے ایک خاندان میں دو افراد کے بھوک کی وجہ سے مرنے کا واقعہ پیش آیا ہے۔ اس واقع کے مطابق ایک 75 سالہ خاتون اپنے 55 سالہ بیٹے کے ساتھ بھوک کی شدت کی وجہ سے انتقال کر گئیں۔

بھارتی میڈیا کے مطابق بھوک کی وجہ سے مرنے والوں کے پڑوسیوں کی جانب سے کہا گیا ہے کہ بھوک کی وجہ سے انتقال کرنے والے خاتون بہت بوڑھی ہو چکی تھی جس کی وجہ سے وہ اپنی پنشن بھی نہیں لے پا رہی تھی اور ان کا 55 سالہ بیٹا کرونا وائرس کی بدولت لاک ڈاؤن کی وجہ سے بری طرح بے روزگار ہو چکا تھا۔ جس کی وجہ سے اکثر ان کے گھر میں فاقے رہتے تھے۔

بھارتی میڈیا کا کہنا ہے کہ پڑوسیوں کی جانب سے بتایا گیا ہے کہ انتقال کرنے والی بوڑھی عورت کا نام گومتی کال تھا۔ گومتی کال اور اس کا بیٹا گھر میں کچھ بھی نہ ہونے کی وجہ سے فری میں ملنے والے راشن سے گزارا کیا کرتے تھے تاہم بھارت میں کورونا وائرس کی شدت کی وجہ سے لاک ڈاؤن لگا دیا گیا تھا جس کی وجہ سے ماں اور بیٹے کو فری راشن بھی ملنا بند ہوگیا تھا۔ جس پر دونوں ماں اور بیٹا کئی روز فاقوں کی صورت میں گزارا کرتے تھے۔

بھارتی میڈیا کے مطابق جاں بحق ہونے والے ماں اور بیٹا کے پڑوسیوں کا کہنا تھا کہ ہم نے دونوں ماں اور بیٹے کو ضرورت کی کوئی بھی چیز مانگنے کی اجازت دے رکھی تھی۔ ایک دن تاہم ان کا بیٹا کسی پڑوسی کے ہاں سے اٹا مانگ کر لایا جس کہ کچھ دن بعد گھر سے بدبو آنے لگی۔

اس صورتحال کو سامنے رکھتے ہوئے پڑوسیوں نے ریسکیو اہلکاروں کو اطلاع دی۔ ریسکیو اہلکاروں کے پہنچنے پر جب گھر کی تلاشی لی گئی تو ماں مردہ حالت میں پائی گئی اور بیٹے کی حالت بھی شدید تشویش ناک تھی۔ تاہم بیٹے کو قریب ہاسپٹل میں منتقل کیا جارہا تھا کہ راستے میں اس کی بھی موت واقع ہو گئی۔

بھارتی میڈیا کے مطابق اس واقعے کو سامنے رکھتے ہوئے تمام اپوزیشن جماعتوں کی جانب سے مودی سرکار کو بھوک کی وجہ سے مرنے والے ماں اور بیٹے کا اصل قاتل قرار دیا جا رہا ہے۔ اپوزیشن جماعتوں کا کہنا ہے کہ مودی سرکار غریبوں کو راشن تقسیم کرنے میں ناکام رہی ہے۔

بھارت میں کرونا وائرس کے مثبت کیسز رپورٹ ہونے کے تمام عالمی ریکارڈ ٹوٹ گئے

ذرائع کے مطابق کرونا وائرس کی تیسری لہر کے پیش نظر بھارت میں دن با دن کرونا وائرس کے کیسز میں بتدریج اضافہ ہوتا دکھائی دے رہا ہے۔ تاہم گزشتہ روز کروناوائرس کے مثبت کیسز رپورٹ ہونے کی تعداد نے تمام عالمی ریکارڈ توڑ دیے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق بھارتی میڈیا کی جانب سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ گزشتہ چوبیس گھنٹوں میں بھارت کے اندر کرونا وائرس کے مثبت کیسز رپورٹ ہونے کی تعداد چار لاکھ سے تجاوز کر گئی ہے۔ یہ دنیا کے کسی بھی ملک میں ایک دن میں سب سے زیادہ کرونا مثبت کیسز رپورٹ ہونے کا ریکارڈ ہے۔

بھارتی میڈیا کے مطابق گزشتہ روز مجموعی طور پر بھارت میں کرونا وائرس کے 4 لاکھ 1 ہزار 993 کیس رپورٹ ہوئے ہیں جبکہ کورونا وائرس سے کی بدولت انتقال کرنے والے افراد کی تعداد 3523 ہے۔

واضح رہے کہ اب تک بھارت میں کورونا وائرس کے مثبت کیسس کی تعداد مجموعی طور پر ایک کروڑ 91 لاکھ 64 ہزار سے بھی تجاوز کر چکی ہے۔ جب کہ کرونا وائرس کی بدولت بھارت میں مجموعی طور پر انتقال کرنے والے افراد کی تعداد دو لاکھ گیارہ ہزار 853 ہو چکی ہے۔

بھارت میں کورونا وائرس کی تیسری لہر کی تباہ کاریوں کو سامنے رکھتے ہوئے امریکی وائٹ ہاؤس کی جانب سے بھارت پر سفری پابندی عائد کردی گئی ہیں۔ وائٹ ہاؤس کے ترجمان کے مطابق بھارت کے شہریوں پر سفری پابندیوں کا آغاز 4 مئی سے شروع ہو جائے گا۔ چار مئی کے بعد کسی کو بھی بھارت سے امریکہ جانے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔

دوسری طرف آسٹریلوی وزیراعظم کی جانب سے بھارت میں موجود آسٹریلوی شہریوں کے بارے میں کہا گیا ہے کہ اب کسی کو آسٹریلیا میں آنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔ اگر اب کوئی بھارت سے آسٹریلیا آئے گا تو اس کو پانچ سال کی سزا دی جائے گی اور بھاری جرمانہ بھی اسے ادا کرنا پڑے گا۔

کورونا وائرس کی تیسری لہر کی تباہ کاریاں، بھارت میں صورتحال کنٹرول سے باہر

ذرائع کے مطابق بھارت میں کرونا وائرس کی تیسری لہر کی تباہ کاریاں جاری ہیں اور صورت حال مزید کنٹرول سے باہر ہوتی جا رہی ہے۔

تفصیلات کے مطابق گزشتہ روز بھارت میں کرونا وائرس مثبت آنے والے لوگوں کی تعداد تین لاکھ 86 ہزار سے بھی زیادہ ہو گئی تھی اس کے ساتھ ساتھ گزشتہ روز کرونا وائرس کے باعث ہونے والی اموات بھی تین ہزار تک جا پہنچی تھی۔

بھارتی میڈیا کے مطابق وزیر صحت برائے بھارت کا کہنا تھا کہ کرونا وائرس میں مبتلا ہونے والے افراد کی تعداد مجموعی طور پر ایک کروڑ 87 لاکھ 62 ہزار سے زیادہ ہو چلی ہے جب کے بھارت میں کرونا وائرس کے باعث انتقال کرنے والے افراد کی مجموعی تعداد دو لاکھ آٹھ ہزار سے بھی بڑھ چکی ہے۔

بھارتی میڈیا کے مطابق بھارت تو میں کرونا وائرس کے ایکٹیو کیسز کی تعداد 31 لاکھ 70 ہزار سے بھی زیادہ ہو چکی ہے تاہم کرونا وائرس میں مبتلا ہونے کے بعد صحت یاب ہونے والے افراد کی تعداد ایک کروڑ 53 لاکھ 84 ہزار سے بھی زیادہ ہے۔

بھارت میں کورونا وائرس کے پھیلنے کی شرح بہت تیز رہی ہے۔ اس کے متعلق بات کرتے ہوئے بھارتی وزیر صحت کا کہنا تھا کہ 7 اگست کو کرونا وائرس کے کیسز کی تعداد 20 لاکھ تھی جو کہ 23 اگست کو 30 لاکھ تک جا پہنچی تھی جب کے 5 ستمبر کو کرونا وائرس کے 40 لاکھ کیسز سامنے آ چکے تھے۔ 28 ستمبر تک کرونا وائرس کے کیسز کی تعداد 60 لاکھ جبکہ 19 اکتوبر تک 80 لاکھ سے بھی زیادہ ہو چکی تھی۔ بھارتی وزارت صحت کے مطابق 19 دسمبر کو بھارت میں کرونا وائرس کے مثبت کے سر کی تعداد ایک کروڑ ہو چکی تھی۔

بھارتی میڈیا کے مطابق گزشتہ روز بھارت میں کرونا وائرس کی بدولت انتقال کرنے والے افراد کی تعداد 3 ہزار 498 تھی۔ گزشتہ روز ہونے والی ہلاکتوں میں پنجاب سے 137، تامل ناڈو سے 107، گجرات 180، راجستھان 158، چھتیس گڑھ 251، جھارکھنڈ سے 145، مہاراشٹرا سے 771، دہلی سے 295 اور کرناٹکا سے 270 ہلاکتیں سامنے آئیں ہیں۔

بھارت میں کرونا وائرس کی تباہ کاریاں، بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کا بیان سامنے آگیا

ذرائع کے مطابق بھارت میں کرونا وائرس سے کی تیسری لہر کی تباہ کاریوں کے متعلق بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کا بیان سامنے آگیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق بھارتی وزیراعظم نریندر مودی کا کرونا وائرس کی تیسری لہر کی وجہ سے پیدا ہونے والی تباہ کاریوں کے متعلق کہنا تھا کہ بھارت میں کرونا وائرس کی تیسری لہر نہیں آئی بلکہ طوفان آیا ہے۔ بھارتی وزیر اعظم نریندر مودی کی جانب سے ریڈیو پر خطاب کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ کرونا وائرس کی تیسری لہر بھارت میں نہیں آئی بلکہ طوفان آیا ہے اور اس طوفان نے پوری بھارتی قوم کو جھنجھوڑ کر رکھ دیا ہے بہت سے بھارتی شہریوں کو قتل سے پہلے ہیں

واضح رہے کہ انٹرنیشنل رپورٹ کے مطابق بھارت میں بری طرح سے تباہ کاریاں پیدا کرنے والی کرونا وائرس کی قسم کا نام” ڈبل میوٹنٹ” ہے۔ اس وقت پورے بھارت میں ڈبل میوٹنٹ نامی کرونا وائرس کی قسم پھیلی چکی ہے۔

تفصیلات کے مطابق امریکی جریدے کی رپورٹ میں لکھا گیا ہے کہ بھارت میں تباہ کاریاں مچانے والی کرونا وائرس کی قسم کا نام ڈبل میوٹنٹ ہے۔ ڈبل میوٹنٹ کرونا وائرس کی نئی اقسام سے مل کر بنی ہے جو کہ کیلیفورنیا، برطانیہ اور جنوبی افریقہ میں پائی گئی ہیں۔

انٹرنیشنل میڈیا کے مطابق امریکی جریدے کی رپورٹ میں مزید کہا گیا ہے کہ بھارت میں پیدا شدہ کرونا وائرس کی قسم ڈبل میوٹنٹ کے پھیلاؤ کی شرح 60 فیصد سے بھی زیادہ ہے۔

انٹرنیشنل میڈیا کی جانب سے کہا گیا ہے کہ بھارت میں پیدا شدہ کرونا وائرس کی نئی قسم ڈبل میوٹنٹ کے 8 مریض اسرائیل میں بھی رپورٹ ہو چکے ہیں۔ اسرائیل کی جانب سے کرونا وائرس کی قسم ڈبل میوٹنٹ کے خلاف سب سے موثر ترین کرونا ویکسین “فائزر بائیو این ٹیک” بتائی جا رہی ہے۔

واضح رہے کہ پوری دنیا اس وقت کرونا وائرس کی تیسری لہر سے پیدا شدہ تباہ کاریوں کی لپیٹ میں ہے۔ ایشیائی ممالک میں بھارت میں کرونا وائرس کی تیسری لہر کے پھیلاؤ کی شرح سب سے زیادہ ہے۔ بھارت میں دن بدن کرونا وائرس کے لاکھوں کے نئے کیسز رپورٹ ہو رہے ہیں۔ بھارتی میڈیا کے مطابق بھارت میں اب تک مجموعی طور پر کرونا وائرس کے تقریبا 1کروڑ 70 لاکھ سے زائد کیسز رپورٹ ہو چکے ہیں۔ جن میں سے اب تک تقریبا 1 لاکھ 87 ہزار سے زائد افراد کی موت واقع ہو چکی ہے اور کرونا وائرس سے صحت یاب ہونے والے افراد کی تعداد تقریبا 1 کروڑ 36 لاکھ کے قریب ہے۔

بھارتی میڈیا کا کہنا ہے کہ اسپتالوں میں مزید مریضوں کے لیے جگہ خالی نہیں ہے تاہم دن بدن کیسز کی رپورٹ ہونے کی شرح بڑھتی جارہی ہے۔ مناسب علاج اور دیکھ بھال نہ ملنے کی وجہ سے لوگ سڑکوں پر موت کی آغوش میں سوتے جا رہے ہیں۔